چیف جسٹس کا یونائیٹڈ کرسچن ہسپتال آمد،اراضی واگزار کروانے کا حکم

یونائیٹڈ کرسچن ہسپتال کی بحالی کے لیے ازخود نوٹس کی سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں سماعت ہوئی۔چیف جسٹس نے ہسپتال کی اراضی پرغیرقانونی قابضین سے اراضی واگزارکرانے کا حکم دے دیاہے۔یونائیٹڈ کرسچن ہسپتال ازخود نوٹس کی سماعت کرتے ہوئے چیف جسٹس پاکستان نے ہسپتال کی اراضی پرغیرقانونی قابض تمام افراد سے اراضی واگزارکرانے کی بھی ہدایت دی۔انھوں نے ریمارکس دیئے کہ ہسپتال کھنڈربن گیا ہے نہ بجلی ہے نہ ڈاکٹرزاور سہولیات۔یہ ہسپتال لاہور کا ائیکون ہے ہم چاہتے ہیں یہاں پھر سے علاج معالجہ شروع ہو۔چیف جسٹس ثاقب نثارنے ہسپتال کی کمیٹی کی میٹنگ بھی فوراًطلب کرلی جس میں ہسپتال سے متعلق انتظامی معاملات کا جائزہ لیا جائے گا۔قبل ازیں چیف جسٹس نے اسپتال کا دورہ کرکے حالات کا جائزہ لیا اور اس بات پر اظہارافسوس کیا کہ اپنے وقت کا بہترین اسپتال زبوں حالی کا شکار ہوکر تباہ ہوگیا ہے اور کسی کو اس کی فکر ہی نہیں ہوئی۔انہوں نے ایمرجنسی اور دیگر وارڈزکا دورہ بھی کیا۔اسپتال آمد پر چیف جسٹس کا پرتپاک استقبال کیا گیا۔نرسز نے ان کو گلدستہ پیش کیا۔اسپتال انتظامیہ کی جانب سے آگاہ کیا گیا کہ ہمیں اسپتال کی مکمل بحالی کے قریباایک ارب روپیہ درکار ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں